جمعہ‬‮ ، 14 جون‬‮ 2024 

مودی کو شرم آ ہی گئی: کسی مذہب کیخلاف تشدد برداشت نہیں، بھارتی وزیراعظم

datetime 18  فروری‬‮  2015
ہمارا واٹس ایپ چینل جوائن کریں

بھارتی وزیراعظم نریندرمودی نے گرجاگھروں پرحملوں کے بعدمذہبی حملوں کی منصوبہ بندی کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے کے عزم کااظہار کرتے ہوئے کہاہے کہ ملک میں ہرشخص کواپنی پسندکا مذہب اختیار کرنے اوراس پرعمل کی مکمل آزادی ہے۔ بھارتی وزیراعظم نے دارالحکومت نئی دہلی میں عیسائی گروپوں کی جانب سے منعقدہ کانفرنس سے خطاب میں کہا کہ میں کسی بھی مذہب کے خلاف تشدد کی مذمت کرتا ہوں۔ میری حکومت کسی بھی اکثریتی یااقلیتی گروپ کودیگر کمیونٹیزکے خلاف نفرت پر اکسانے کی اجازت نہیں دے گی۔ ان کا یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب بھارت میں اقلیتوں پرحملوں میں اضافہ ہوا ہے۔ بی جے پی کی حکومت بننے کے بعد سے مذہبی منافرت بڑھی ہے اورحکمراں جماعت سے نظریاتی مماثلت رکھنے والی ہندوتنظیمیں کھلے عام ان عیسائیوں اور مسلمانوں کوہندو بنانے کادعویٰ کررہی ہیں جو ان کے مطابق پہلے ہندو تھے۔ سماجی وانسانی حقوق کے کارکنوں اور حزب اختلاف کی جانب سے سخت تنقید کے باوجود وزیراعظم نے اب تک واضح الفاظ میں اس پروگرام کی مذمت نہیںکی تھی تاہم اب انھوں نے کہاکہ ہم کسی بھی وجہ سے کسی مذہب کے خلاف تشددبرداشت نہیں کرسکتے۔ میں ایسے حملوںکی سخت مذمت کرتاہوں۔ واضح رہے کہ دہلی میں گزشتہ چندہفتوں میں 5 گرجا گھروں کونشانہ بنایا گیا ہے۔ امریکی صدر اوبامانے بھی اپنے دورے میں انتباہ کیاتھا کہ بھارت کی ترقی کا راز اس کے مذہبی تفریق کے معاملات پرقابو پانے اوراقلیتوں سے انصاف میں مضمرہے۔ گجرات میں مودی کی وزارت اعلیٰ کے دورمیں مسلم کش فسادات میں1,000سے زائد مسلمان شہیدکردیے گئے تھے جس پر مغربی ممالک نے برسوں مودی گریز پالیسی اختیارکیے رکھی۔ وزیراعظم نے کہاکہ ان کی حکومت ہرمذہب کابرابر احترام کرے گی۔ انھیں ترقی کے ایجنڈے کی وجہ سے اتنی زبردست انتخابی کامیابی ملی۔ یہ واضح نہیںکہ مودی کے تازہ بیان پر وشواہندو پریشداور آرایس ایس کاکیا ردعمل ہوگاجوکہتی رہی ہیںکہ گھر واپسی کے پروگرام میں کوئی برائی نہیں۔ دہلی میںبی جے پی کی شکست کے بعد تقریباً ہراخبار نے اداریوں اورماہرین نے تجزیوں میں کہا کہ بی جے پی کو اپنی حکمت عملی پر نظرثانی کرنا چاہیے، عوام نے ترقی کے لیے ووٹ دیے تھے، گھر واپسی جیسے پروگراموں کے لیے نہیں۔



کالم



شرطوں کی نذر ہوتے بچے


شاہ محمد کی عمر صرف گیارہ سال تھی‘ وہ کراچی کے…

یونیورسٹیوں کی کیا ضرروت ہے؟

پورڈو (Purdue) امریکی ریاست انڈیانا کا چھوٹا سا قصبہ…

کھوپڑیوں کے مینار

1750ء تک فرانس میں صنعت کاروں‘ تاجروں اور بیوپاریوں…

سنگ دِل محبوب

بابر اعوان ملک کے نام ور وکیل‘ سیاست دان اور…

ہم بھی

پہلے دن بجلی بند ہو گئی‘ نیشنل گرڈ ٹرپ کر گیا…

صرف ایک زبان سے

میرے پاس چند دن قبل جرمنی سے ایک صاحب تشریف لائے‘…

آل مجاہد کالونی

یہ آج سے چھ سال پرانی بات ہے‘ میرے ایک دوست کسی…

ٹینگ ٹانگ

مجھے چند دن قبل کسی دوست نے لاہور کے ایک پاگل…

ایک نئی طرز کا فراڈ

عرفان صاحب میرے پرانے دوست ہیں‘ یہ کراچی میں…

فرح گوگی بھی لے لیں

میں آپ کو ایک مثال دیتا ہوں‘ فرض کریں آپ ایک بڑے…

آئوٹ آف دی باکس

کان پور بھارتی ریاست اترپردیش کا بڑا نڈسٹریل…