خدا نے تجھے انسان اور مجھے کتا کیوں بنایا؟‎

  جمعہ‬‮ 15 فروری‬‮ 2019  |  14:59

پیر مہر علی شاہ صاحب فرماتے ہیں کہ ایک با ر حضرت جنید بغدادیؒ کسی راستے سے گزر زہے تھے کہ اچانک اُنکے سامنے ایک کُتا آ کھڑا ہوا۔ دیکھتے ہی دیکھتے حضرت جنید بغدادیؒ اُس کُتے کے سامنے ہاتھ باندھ کر کھڑے ہوگئے۔ پاس سے گزرتے ہوئے لوگوں نے پوچھا کہ آپ جنید بغدادیؒ ہیں آپ اِس کُتے کے سامنے ہاتھ باندھے کیوں کھڑے ہیں۔ فرمایا اِس کتے نے مجھ سے ایسا سوال پوچھ لیا جس کا میرے پاس کوئی جواب نہیں تھا، اس لئے میں اسکے سامنے ہاتھ باندھ کر کھڑا ہوگیا۔ لوگوں نے پوچھا ایسا کیا سوال تھا


تو جنید بغدادی نے کہا اُس نے مجھ سے پوچھا کہ اے جنید تجھ میں ایسی کیا خوبی تھی اور مجھ میں ایسی کیا خامی تھی کہ خُدا نے تجھے اتنا عظیم انسان اور مجھے ایک کُتا بنایا؟جنید بغدادی نے پھر اُس کتے سے کہا کہ یہ صرف اللہ کا مجھ ناچیز پر کرم ہے کہ اُس نے مجھے انسان بنایا۔آج ہم انسان ہو کر بھی اللہ کا شکر نہیں ادا کرتے کہ اللہ نے ہمیں انسان بنایا ہمیں وہ سب چیزیں دی جو اِن جانوروں کو نہیں دی۔ اس لئے ہر چیز پر اللہ کا شکر ادا کیا کرو۔


loading...