دھیر کوٹ آزاد کشمیر، توہین مذہب کے الزام میں ایک شخص کو سزائے موت

  اتوار‬‮ 26 جون‬‮ 2022  |  11:58

مظفر آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)آزادکشمیر کی ایک عدالت نے توہین مذہب کے الزام میں ایک شخص کو سزائے موت سنائی ہے تاہم اس کے بھائیوں کا دعویٰ ہے کہ وہ ذہنی مرض میں مبتلا ہے اور وہ اس کے خلاف ہائی کورٹ میں اپیل کریں گے۔بی بی سی اردو  کے مطابق ضلع باغ کے علاقے دھیرکوٹ میں قائم ایڈیشنل ضلعی فوجداری عدالت نےاپنی نوعیت کے پہلے فیصلے میں محمد شفیق خان کو

سزائے موت کا حکم سنایا ہے۔فیصلے میں کہا گیا ہے کہ محمد شفیق خان پر توہین مذہب کی دفعہ 295 سی  کے تحت درج مقدمہ میں الزام ثابت ہونے پر سزائے موت اور 10 لاکھ روپے جرمانہ کی سزا سنائی جاتی ہے۔ جرمانے کی عدم ادائیگی کی صورت میں مجرم ایک سال قید کی سزا بھگتے گا۔سزائے موت پانے والے قیدی کے بھائی محمد رفیق خان کے مطابق وہ اس فیصلے کے خلاف کشمیر ہائی کورٹ میں اپیل دائر کریں گے کیونکہ ان کا بھائی شیزوفرینیا کے مرض میں مبتلا ہے۔وہ بتاتے ہیں کہ ’مقدمہ درج ہونے سے قبل ہی اس کا علاج چل رہا تھا۔ تمام تر میڈیکل رپورٹس کے باوجود ان پر درج مقدمہ دباؤ کا نتیجہ ہے۔‘رفیق کا کہنا ہے کہ ’میرا بھائی صرف میٹرک پاس ہے۔ اس کے تین کم عمر بچے ہیں۔ یہ سعودی عرب، سوڈان اور پاکستان میں محنت مزدوری کرتا رہا۔ اس کا سعودی عرب میں علاج چلتا رہا تھا۔ اسی بنا پر کسی بھی جگہ کوئی ملازمت بھی نہیں کرسکا ہے۔‘شفیق کے ایک اور بھائی راجہ محمد ضمیر کہتے ہیں کہ ’میرا بھائی 2016 سے اپنے مکمل حواس میں نہیں ہے۔ اس کا ہم مختلف ہسپتالوں اور ڈاکٹروں سے علاج کروا رہے ہیں۔ اس کو علاج کے لیے کراچی تک لے کر گئے۔

مکمل ریکارڈ دستیاب ہے۔ اس مقدمہ کے درج ہونے سے پہلے بھی علاج چل رہا تھا۔ وہ اسلام آباد کے ہسپتال میں داخل تھا۔‘ان کا کہنا تھا کہ بھائی کی گرفتاری بھی ہسپتال سے دوران علاج ہوئی۔’جو کچھ کہا گیا ہم اسے سپورٹ نہیں کرتے مگر یہ ضرور کہتے ہیں کہ خدارا اس کی دماغی حالت کا تو اندازہ کریں۔ اس کو تو اپنا کوئی ہوش نہیں ہوتا کہ وہ کیا کر رہا ہے اور کیا کہہ رہا ہے۔‘

شفیق کے وکیل راجہ امتیاز خان ایڈووکیٹ کی رائے ہے کہ مقدمے میں عدالت کو مجرم کی دماغی حالت کو مدنظر رکھنا چاہیے تھا۔’میڈیکل بورڈ کے اندر بھی کہا گیا کہ ملزم نفیساتی مریض ہے اور اس کو ایک لبمے علاج کی ضرورت ہے۔‘ان کا کہنا تھا کہ ’دوران ٹرائل استغاثہ کے گواہوں سے جب پوچھا گیا کہ کیا وہ جانتے ہیں کہ شفیق نفیساتی امراض کا شکار ہیں تو انھوں نے کہا کہ ہمیں معلوم نہیں ہے۔‘

قانونی طور پر کسی بھی جرم کے مرتکب شخص کی نفسیاتی اور دماغی صورتحال کو مدنظر رکھا جانا ضروری ہے۔فروری 2021 کے دوران پاکستان کی سپریم کورٹ نے ذہنی معذور افراد کی سزائے موت روکنے کا فیصلہ کیا تھا۔اس میں عدالت نے قرار دیا کہ اگر کوئی میڈیکل بورڈ اس بات کی تصدیق کر دے کہ مدعا علیہ جرم اور اس کی سزائے موت کے پیچھے جواز کو سمجھنے سے قاصر ہے، تو سزا پر عملدرآمد روک دیا جائے گا۔



موضوعات:

زیرو پوائنٹ

سانو۔۔ کی

سانو ۔۔کی پنجابی زبان کا ایک محاورہ یا ایکسپریشن ہے‘ اس کا مطلب ہوتا ہے ہمیں کیا فرق پڑتا ہے‘ ہمارے باپ کا کیا جاتا ہے‘ ہمارا کیا نقصان ہے یاپھر آئی ڈونٹ کیئر‘ ہم پنجابی لوگ اوپر سے لے کر نیچے تک اوسطاً دن میں تیس چالیس مرتبہ یہ فقرہ ضرور دہراتے ہیں لہٰذا اس کثرت استعمال کی وجہ ....مزید پڑھئے‎

سانو ۔۔کی پنجابی زبان کا ایک محاورہ یا ایکسپریشن ہے‘ اس کا مطلب ہوتا ہے ہمیں کیا فرق پڑتا ہے‘ ہمارے باپ کا کیا جاتا ہے‘ ہمارا کیا نقصان ہے یاپھر آئی ڈونٹ کیئر‘ ہم پنجابی لوگ اوپر سے لے کر نیچے تک اوسطاً دن میں تیس چالیس مرتبہ یہ فقرہ ضرور دہراتے ہیں لہٰذا اس کثرت استعمال کی وجہ ....مزید پڑھئے‎