یمنی فوج کا دمت شہر میں نئے ٹھکانوں پر کنٹرول،حوثی باغیوں میں اضطراب

  جمعہ‬‮ 9 ‬‮نومبر‬‮ 2018  |  12:30

صنعاء(این این آئی)یمن کے صوبے الضالع میں سرکاری فوج نے دمت شہر کے جنوبی اور مغربی حصوں میں دو نئے ٹھکانوں کو کنٹرول میں لے لیا، یہ پیش رفت صوبے کو آزاد کرانے کے لیے جاری فوجی آپریشن کے چوتھے روز سامنے آئی،ادھر حوثی ملیشیا نے الحقب گاؤں میںشہریوں کے گھروں پر اندھادھند مارٹر گولوں برسائے جس کے نتیجے میں 3 خواتین جاں بحق اور دو بچے زخمی ہو گئے۔عرب ٹی وی کے مطابق یمنی فوج کے فورتھ بریگیڈ کے عسکری اہل کار نصر الرازقی کے مطابق دمت شہر کے مغرب میں واقع علاقے خاب البوابہ کو بھی واپس لینے

کی تصدیق کی ہے۔ یمنی فوج کے میڈیا سینٹر نے دمت ضلع میں آزاد کرائے گئے مقامات کی ایک وڈیو جاری کی ہے۔ یہ الضالع صوبے میں حوثی ملیشیا کے آخری گڑھ ہیں۔یمنی فوج نے عرب اتحاد کی معاونت سے دمت شہر کے اطراف اپنی پوزیشن کو مضبوط بنا لیا ہے۔ اس دوران شہر پر بھرپور حملے اور اسے حوثی ملیشیا سے پاک کرنے کی تیاریاں جاری ہیں۔ زمینی ذرائع کے مطابق جانی نقصان میں اضافے کے باعث حوثی باغیوں کی صفوں میں کھلبلی مچی ہوئی ہے۔حوثی ملیشیا نے الحقب گاؤں میں شہریوں کے گھروں پر اندھادھند مارٹر گولوں برسائے جس کے نتیجے میں 3 خواتین جاں بحق اور دو بچے زخمی ہو گئے۔یمنی فوج میں اِب ریجن کے کمانڈر احمد البحش نے بتایا کہ یمنی فوج نے علاقے میں حوثی ملیشیا کی جانب سے بچھائی گئی تمام بارودی سرنگوں کو ناکارہ بنا دیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سب سے پہلے قلعہ ناصہ کا علاقہ آزاد کرایا گیا۔ اس کے بعد التہامی، عرفاف، السطاح، خارم، بیت الیزیدی، الحقب اور اب یمنی فوج دمت شہر کے مغرب میں پہاڑی سلسلے میں مصروف عمل ہے۔البحش کے مطابق حوثی ملیشیا کو بھاری جانی نقصان اٹھانا پڑا ہے اور جبلِ ناصہ میں باغیوں کی 25 سے زیادہ کٹی پھٹی لاشیں ابھی تک پڑی ہوئی ہیں۔ انہوں نے ریڈ کراس انٹرنیشنل سے مطالبہ کیا کہ حوثیوں کی لاشوں کو اٹھانے میں مدد فراہم کریں۔یمنی فوج نے تزویراتی اہمیت کے حامل جبل ناصہ سے حوثی ملیشیا کو مار بھگایا۔ اس کے سبب جبل التہامی اور دمت شہر کے اطراف متعدد دیہات کو آزاد کرانے میں آسانی ہو گئی۔

موضوعات:

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں