سربراہ کا تعین میرٹ پر ہو گا، اس تحریک کو کبھی موروثی جماعت نہیں بنائیں گے، سعد رضوی کے امیر بننے پر پیر افضل قادری علامہ کا پرانا بیان سامنے لے آئے

  ہفتہ‬‮ 21 ‬‮نومبر‬‮ 2020  |  18:31

لاہور (آن لائن+ مانیٹرنگ ڈیسک) علامہ سعد رضوی کو تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کا نیا امیر مقرر کر دیا گیا۔ تحریک لبیک پاکستان کے امیر خادم حسین رضوی کے انتقال کے بعد ان کے بڑے صاحبزددے علامہ سعد حسین رضوی کو تحریک لبیک پاکستان کا نیا امیر مقرر کر دیا گیا ہے، علامہ سعد حسین رضوی اس سے قبل تحریک لبیک کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل تھے۔تحریکلبیک پاکستان کے نئے امیر کا اعلان ہفتہ کو لاہور میں ان کی نمازہ جنازہ کی ادائیگی کے بعد مینار پاکستان کے ساتھ گریٹر پارک کے اجتماع میں کیا گیا۔ تحریک لبیک پاکستان


کے نئے امیر علامہ سعد رضوی نے میڈیا سے مختصر بات چیت کر تے ہوئے کہا کہ اپنے مرحوم والد علامہ خادم حسین رضوی کی نصحیت پر عمل کریں گے اور ان کے مشن کو جا ری رکھیں گے۔نماز جنازہ بھی علامہ خادم حسین رضوی کے صاحبزادے حافظ سعد حسین رضوی نے پڑھائی۔ اس سے قبل شرکا ء سے خطاب کرتے ہوئے نو منتخب امیر حافظ سعد حسین رضوی نے کہا کہ ہم علامہ خادم حسین رضوی کی نصیحت پر عمل کریں گے،گستاخی رسول کسی صورت برداشت نہیں کریں گے اور مرحوم کا مشن جاری رکھیں گے۔ اس موقع پر تمام شرکاء ہاتھ بلند کر کے اس کی توثیق اور تائید کرتے رہے۔ دوسری جانب پیرافضل قادری نے سعد حسین رضوی کو امیر بنائے جانے پر اپنے ردعمل میں علامہ خادم حسین رضوی کی وفات پر رنجیدگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اب وہ اس جماعت کا حصہ نہیں ہیں۔ پیر افضل قادری نے کہا کہ خادم حسین رضوی یہ کہتے رہے تھے کہ وہ تحریک کو کبھی موروثی جماعت نہیں بنائیں گے، وہ کہتے تھے جماعت کے سربراہ کا تعین میرٹ پر ہی ہوگا۔ بی بی سی پر معروف صحافی اعزاز سید نے اپنی رپورٹ میں لکھا کہ تحریک لبیک کے بعض رہنماؤں کا خیال تھا کہ جماعت کی مرکزی شوریٰ میںموجود تحریک کے وسطی پنجاب کے امیر فاروق الحسن خادم حسین رضوی کے جانشین بننے کے اہل ہیں کیونکہ وہ خادم رضوی کی طرح بلا کے مقرر اور دیگر انتظامی صلاحیتوں کے حامل ہیں۔لیکن علامہ خادم حسین رضوی کے بڑے صاحبزادے حافظ سعد رضوری کو ہی تحریک کا نیا امیر مقرر کیے جانے کا اعلان کر دیا گیا۔واضح رہے کہ تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادمحسین رضوی کو نماز جنازہ کی ادائیگی کے بعد مسجد رحمت العالمین سے ملحقہ مدرسہ ابوذر غفاری میں سپرد خاک کر دیا گیا، نماز جنازہ مینار پاکستان گراؤنڈ (گریٹر اقبال پارک)میں ادا کی گئی جس میں ملک بھر سے بڑی تعداد میں تحریک کے کارکنان اورعقیدتمندوں نے شرکت کی،نماز جنازہ میں وفاقی وزیر مذہبی امور پیر نو ر الحق قادری، چیئرمین مرکزی رویت ہلال کمیٹی مفتیمنیب الرحمان سمیت دیگر مذہبی و سیاسی شخصیات اورمختلف درگاہوں کے گدی نشینوں نے شرکت کی، نماز جنازہ کے موقع پر پولیس کی جانب سے سکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے جبکہ تحریک لبیک کے رضا کاربھی فرائض سر انجام دیتے رہے، کمشنر لاہور ڈویژن مرکزی کنٹرول روم میں بیٹھ کر سکیورٹی سمیت دیگر انتظامات کی خود نگرانی کرتے رہے۔


موضوعات:

زیرو پوائنٹ

بڑے چودھری صاحب

انیس سو ساٹھ کی دہائی میں سیالکوٹ میں ایک نوجوان وکیل تھا‘ امریکا سے پڑھ کر آیا تھا‘ ذہنی اور جسمانی لحاظ سے مضبوط تھا‘ آواز میں گھن گرج بھی تھی اور حس مزاح بھی آسمان کو چھوتی تھی‘ یہ بہت جلد کچہری میں چھا گیا‘ وکیلوں کے ساتھ ساتھ جج بھی اس کے گرویدا ہو گئے‘ اس ....مزید پڑھئے‎

انیس سو ساٹھ کی دہائی میں سیالکوٹ میں ایک نوجوان وکیل تھا‘ امریکا سے پڑھ کر آیا تھا‘ ذہنی اور جسمانی لحاظ سے مضبوط تھا‘ آواز میں گھن گرج بھی تھی اور حس مزاح بھی آسمان کو چھوتی تھی‘ یہ بہت جلد کچہری میں چھا گیا‘ وکیلوں کے ساتھ ساتھ جج بھی اس کے گرویدا ہو گئے‘ اس ....مزید پڑھئے‎