کالعدم تحریک کے سربراہ کو رہا کردیا گیا‎

  منگل‬‮ 20 اپریل‬‮ 2021  |  14:50

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک )کالعدم تحریک کے سربراہ کو لاہور کی کوٹ لکھپت جیل سے رہا کردیا گیا۔محکمہ جیل خانہ جات پنجاب کے تعلقات عامہ کے افسر عتیق احمد نے اس پیشرفت کی تصدیق کی۔نجی ٹی وی ڈان کے مطابق رہائی کے فوری بعد تحریک کے امیر یتیم خانہ چوک پہنچے جہاں ان کا کارکنان سے خطاب متوقع ہے، کالعدم تحریک کے سربراہ کی رہائی قومی اسمبلی کےاجلاس میں فرانسیسی سفیر کو واپس بھیجنے کی قرارداد پیش کیے جانے سے چند گھنٹے قبل سامنے آئی ہے۔قبل ازیں حکومت اور کالعدم تحریک کے مابین مذاکرات میں مثبت پیشرفت،جماعت کے سربراہ نے


دھرنا ختم کرنے اور 20اپریل کو لانگ مارچ کی کال واپس لینے کی رضامندی ظاہر کر دی ہے ۔ کالعدم تحریک کے امیر کی حکومتی مذاکراتی ٹیم کیساتھ کوٹ لکھپت جیل میں ملاقات ہوئی جس میں انہوں نے 20اپریل کولانگ مار چ کی کال کوواپس لینے کی حامی بھر لی ہے ۔ حکومت کی جانب سے مذاکراتی ٹیم میں وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد ، وفاقی وزیر برائے مذہبی امور نور الحق ، گورنر پنجاب سمیت وزیر قانون پنجاب راجہ بشارت شامل تھے۔ خیال رہے کہ کالعدم جماعت کی جانب سے وفاقی وزیر شیخ رشید احمد کے استعفے کا مطالبہ کیا گیا تھا ۔ نجی ٹی وی دنیا نیوز کی رپورٹ کے مطابق کالعدم جماعت نے وفاقی وزیر داخلہ کے استعفے کے ساتھ ساتھ اپنے سربراہ کی رہائی کا مطالبہ بھی کیا ہے۔ کالعدم جماعت نے حکومت کے سامنے اپنے مطالبات رکھ دیے۔نجی ٹی وی کے ذرائع کے مطابق حکومتی وفد اور کالعدم جماعت کے درمیان مذاکرات جاری ہیں۔ ذرائع کے مطابق کالعدم جماعت کے قائدین فرانسیسی سفیر کی ملک بدری کے مطالبے پر قائم ہیں جبکہ کارکنوں کی فی الفور رہائی کی بھی حکومتی وفد سے ڈیمانڈ کی جا رہی ہے تاہم حکومتی وفد نے کالعدم تحریک لبیک کے قائدین پر واضح کر دیا ہے کہ فرانسیسی سفیر کی ملک بدری اور شیخ رشید کے استعفے کا مطالبہ تسلیم نہیں کیا جائے گا۔


زیرو پوائنٹ

درمیان

یہ ایک ڈاکٹر کی کہانی ہے‘ ڈاکٹر صاحب اس وقت آسٹریلیا میں ہیں اور یہ وہاں ایسی شان دار زندگی گزار رہے ہیں جس کا ان کے کسی کلاس فیلو نے خواب تک نہیں دیکھا تھا‘ ہم سب لوگ زندگی میں ٹاپ کرنا چاہتے ہیں‘ ہم ہر کلاس میں اول آنا چاہتے ہیں‘ ہم بازار کا مہنگا ترین لباس خریدنا ....مزید پڑھئے‎

یہ ایک ڈاکٹر کی کہانی ہے‘ ڈاکٹر صاحب اس وقت آسٹریلیا میں ہیں اور یہ وہاں ایسی شان دار زندگی گزار رہے ہیں جس کا ان کے کسی کلاس فیلو نے خواب تک نہیں دیکھا تھا‘ ہم سب لوگ زندگی میں ٹاپ کرنا چاہتے ہیں‘ ہم ہر کلاس میں اول آنا چاہتے ہیں‘ ہم بازار کا مہنگا ترین لباس خریدنا ....مزید پڑھئے‎