14

ﺑﮭﯿﺲ ﺑﺪﻝ ﮐﺮ ﮔﺸﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﻭﯾﺶ

  پیر‬‮ 20 مارچ‬‮ 2017  |  22:28
ﺷﺎﻡ ﮐﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻣﻠﮏ ﺍﻟﺼﺎﻟﺢ ﺍﯾﻮﺑﯽ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﺩﺕ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺑﮭﯿﺲ ﺑﺪﻝ ﮐﺮ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﮔﺸﺖ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﺎﮐﮧ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯدکھ ﺩﺭﺩ ﺧﻮﺩ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﺳﮑﮯ- ﺍﯾﮏ ﺭﺍﺕ ﻭﮦ ﺣﺴﺐ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﻮﻡ ﺭﮨﺎﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﺩﺭﻭﯾﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﯾﮏ ﮐﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺳﺮﺩﯼ ﺳﮯ ﭨﮭﭩﮭﺮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﮐﻮﺱ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ- ﺍﯾﮏ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﺎﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻣﺘﮑﺒﺮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺧﻮﺩ ﺗﻮ ﻋﯿﺶ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﻏﺮﯾﺐ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺳﺨﺘﯿﺎﮞ ﺟﮭﯿﻞ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺁﺧﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﺑﮩﺸﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﮕﮧ ﻣﻠﯽ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ

(خصوصی فیچر جاری ہے)

ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﺒﺮ ﮐﻮ ﺗﺮﺟﯿﺢ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ- ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﻣﻠﮏ ﺍﻟﺼﺎﻟﺢ ﺑﮩﺸﺖ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺑﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺗﮯ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﺮ ﭘﮭﻮﮌ ﮈﺍﻟﻮﮞ ﮔﺎ- ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺳﻦ ﮐﺮ ﭼﭙﮑﮯ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﮔﯿﺎ ﺻﺒﺢ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺩﺭﻭﯾﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﺭﺑﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻃﻠﺐ ﮐﯿﺎ ﺟﺐ ﻭﮦ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﮍﯼ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﻭ ﺗﮑﺮﯾﻢ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺗﻨﺎ کچھ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻋﻤﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻓﮑﺮ ﻣﻌﺎﺵ ﺳﮯ ﺁﺯﺍﺩ ﮨﻮﮔﺌﮯ- ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯽ ﮐﮧ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﻨﺎﮦ ﮨﻢ ﺧﺎﺩﻣﻮﮞ ﮐﺎ

(خصوصی فیچر جاری ہے)

ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﺎ ﭘﺴﻨﺪ ﺁﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺍﻟﻄﺎﻑ ﻭﺍﮐﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﭨﮭﮩﺮﺍﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮨﻨﺲ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ - ﻣﻦ ﺍﻣﺮﻭﺯ ﮐﺮﺩﻡ ﺩﺭﺻﻠﺢ ﺑﺎﺯ ﺗﻮ ﻓﺮﺩﺍ ﻣﮑﻦ ﺩﺭ ﺑﺮﺩﯾﻢ ﻓﺮﺍﺯ ﯾﻌﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺁﺝ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺻﻠﺢ ﮐﺮﻟﯽ ﮨﮯ ﺍﻣﯿﺪ ﮨﮯ ﮐﻞ ﺗﻢ مجھ ﭘﺮ ﺟﻨﺖ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺯﺍﮦ ﺑﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ! ہاتھ یا پاوں سو گئے ہیں؟؟ کوئی بات نہیں۔۔ابھی جگا لیتے ہیں۔۔اپنے سر کو دائیں سے بائیں یا کلاک وائز اور اینٹی کلاک وائز گھمانا شروع کر دیں۔۔چند سیکنڈز کے اندر اندر ہاتھ یا پاوں نیند سے بیدار ہو جائیں گے۔

ﺷﺎﻡ ﮐﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻣﻠﮏ ﺍﻟﺼﺎﻟﺢ ﺍﯾﻮﺑﯽ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﺩﺕ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺑﮭﯿﺲ ﺑﺪﻝ ﮐﺮ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﮔﺸﺖ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﺎﮐﮧ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯدکھ ﺩﺭﺩ ﺧﻮﺩ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﺳﮑﮯ- ﺍﯾﮏ ﺭﺍﺕ ﻭﮦ ﺣﺴﺐ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﻮﻡ ﺭﮨﺎﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﺩﺭﻭﯾﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﯾﮏ ﮐﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺳﺮﺩﯼ ﺳﮯ ﭨﮭﭩﮭﺮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﮐﻮﺱ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ-

ﺍﯾﮏ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﺎﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻣﺘﮑﺒﺮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺧﻮﺩ ﺗﻮ ﻋﯿﺶ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﻏﺮﯾﺐ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺳﺨﺘﯿﺎﮞ ﺟﮭﯿﻞ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺁﺧﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﺑﮩﺸﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﮕﮧ ﻣﻠﯽ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺸﺖ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﺒﺮ ﮐﻮ ﺗﺮﺟﯿﺢ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ- ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﻣﻠﮏ ﺍﻟﺼﺎﻟﺢ ﺑﮩﺸﺖ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺑﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺗﮯ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﺮ ﭘﮭﻮﮌ ﮈﺍﻟﻮﮞ ﮔﺎ- ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺳﻦ ﮐﺮ ﭼﭙﮑﮯ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﮔﯿﺎ ﺻﺒﺢ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺩﺭﻭﯾﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﺭﺑﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻃﻠﺐ ﮐﯿﺎ ﺟﺐ ﻭﮦ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﮍﯼ ﺗﻌﻈﯿﻢ ﻭ ﺗﮑﺮﯾﻢ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺗﻨﺎ کچھ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻋﻤﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻓﮑﺮ ﻣﻌﺎﺵ ﺳﮯ ﺁﺯﺍﺩ ﮨﻮﮔﺌﮯ- ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯽ ﮐﮧ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﻨﺎﮦ ﮨﻢ ﺧﺎﺩﻣﻮﮞ ﮐﺎ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﺎ ﭘﺴﻨﺪ ﺁﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺍﻟﻄﺎﻑ ﻭﺍﮐﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﭨﮭﮩﺮﺍﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮨﻨﺲ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ –
ﻣﻦ ﺍﻣﺮﻭﺯ ﮐﺮﺩﻡ ﺩﺭﺻﻠﺢ ﺑﺎﺯ
ﺗﻮ ﻓﺮﺩﺍ ﻣﮑﻦ ﺩﺭ ﺑﺮﺩﯾﻢ ﻓﺮﺍﺯ
ﯾﻌﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺁﺝ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺻﻠﺢ ﮐﺮﻟﯽ ﮨﮯ ﺍﻣﯿﺪ ﮨﮯ ﮐﻞ ﺗﻢ مجھ ﭘﺮ ﺟﻨﺖ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺯﺍﮦ ﺑﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ!
ہاتھ یا پاوں سو گئے ہیں؟؟ کوئی بات نہیں۔۔ابھی جگا لیتے ہیں۔۔اپنے سر کو دائیں سے بائیں یا کلاک وائز اور اینٹی کلاک وائز گھمانا شروع کر دیں۔۔چند سیکنڈز کے اندر اندر ہاتھ یا پاوں نیند سے بیدار ہو جائیں گے۔

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

loading...

روزانہ کی دس بڑی خبریں بذریعہ ای میل حاصل کریں

بذریعہ ای میل آپ کو دس بڑی خبروں کے ساتھ ساتھ کرنسی اور سونے کے ریٹس بھی بھیجے جائیں گے۔