تبت سطح مرتفع یا دنیا کی چھت میں کیسی تبدیلیاں آرہی ہیں؟چینی سائنسدانوں کے بھیانک انکشافات،خطرناک پیش گوئی کردی

  جمعہ‬‮ 14 جولائی‬‮ 2017  |  23:55

شینگ(آئی این پی)چنگ ہائی ۔ تبت سطح مرتفع یا دنیا کی چھت عالمی ماحولیاتی تبدیلی کے اثرات کے تحت زیادہ گرم ترین اور سرد ترین ہوگئی ہے ۔سطح سمندر سے قریباً تین ہزار سے لیکر پانچ ہزار میٹر کی بلندی پر واقع سطح مرتفع جنوب مغربی چین میں ہمسایہ علاقوں اور تبت اور مغربی صوبہ چنگ ہائی پر مشتمل ہے ۔ اس پر ہزاروں گلیشیئر ہیں اور چین اور گردونواح سے گزرنے والے بعض اہم دریاؤں کے دہانوں کا مسکن ہے۔چینی سائنسدانوں کے مطابق یہ سطح مرتفع جو ماحولیاتی تبدیلی کے لئے انتہائی حساس ہے ۔زیادہ گرم ترین اور سرد

ترین بن گیا ہے ۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ انتہائی موسمی حالات کی وجہ سے سطح مرتفع پر موجود جھیلیں پھیلتی جا رہی ہیں ، گلیشئر سکڑتے جا رہے ہیں جس کی وجہ سے قومی سانحات کے خطرات بڑھتے جا رہے ہیں ۔ کوہ والی گوان پرچین کی گلوبل ایٹماس فیئر واچ بیس لائن آبزوریٹری کے مطابق زہریلی گیس کاربن ڈائی آکسائیڈ کے ارتکاز میں دو پارٹس فی ملین سالانہ کا اضافہ ہوا ہے ۔یہ اسٹیشن عالمی تنظیم موسمیات کی طرف سے قائم کی جانے والی 31عالمی بنیادی رسد گاہوں میں شمار ہوتا ہے ۔سائنسدانوں کا کہنا ہے اعداد وشمار سے ہمیں پتہ چلتا ہے کہ زہریلی گیس کا اخراج اب بھی بہت بڑا مسئلہ ہے اور عالمی حدت کے رجحان بڑا کٹھن ہے ۔ ہمارے پاس غالباً سطح مرتفع کو زیادہ سرد ترین اورگرم ترین ہونے سے روکنے کیلئے کوئی طریقہ نہیں ہے تاہم ہمارے لئے ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم اس کی وجوع کا مطالعہ کریں اور چیلنجوں سے نمٹیں۔ آئندہ پچاس برسوں میں خاصی بارش یانگڑژی ، زرد اور لن کانگ (می کانگ) دریاؤں کے دہانے سان جیان ہوان میں جنگلات میں اضافے میں مدد ملے گی ۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ایسے علاقے جو کہ انسانوں کیلئے انتہائی کٹھن تھے اب مسکن بنتے جا رہے ہیں ۔گڈریوں نے یانگڑژی کے ذریعے پر گلیشیئر کے دامن میں گھر تعمیر کر لیے ہیں ۔ سطح سمندر سے 6542میٹر کی بلندی پر جیانگ گوڈائرو گلیشئر کا شمار یانگڑژی کے دہانے پر سب سے بڑے گلیشیئروں میں ہوتا ہے ۔ یہ 1970کی دہائی میں گھٹنا شروع ہوگیا ۔1990کی دہائی کے بعد گھٹنے کی رفتار تیز ہوگئی اور 2010سے2016تک اس کی رفتار کہیں تیز ہوگئی ۔ اس مدت میں یہ قریباً6میٹر سالانہ سکڑنا شروع ہوا ہے ۔ چین کی سائنس اکیدمی کے ریسرچر ہوجیانچن کے مطابق گھٹتا ہوا گلیشیئر عالمی ماحولیاتی تبدیلی کا براہ راست ثبوت ہے ۔ مختصراً یہ کہ اگر گلیشیئروں کے سکڑنے سے دریاؤں کی سطح بلند ہو جائے گی اور بظاہر اچھی بات ہوگی لیکن طویل المعیاد میں اس سے دریا بری طرح متاثر ہوں گے اور زمین کی ویرانی بڑھ جائے گی ۔

موضوعات:

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

روزانہ کی دس بڑی خبریں بذریعہ ای میل حاصل کریں

بذریعہ ای میل آپ کو دس بڑی خبروں کے ساتھ ساتھ کرنسی اور سونے کے ریٹس بھی بھیجے جائیں گے۔