مسیحی لڑکی نے اسلام قبول کے بعد مسلم نوجوان سے نکاح کر لیا،بات یہی ختم نہ ہوئی،معاملہ ہائیکورٹ جاپہنچا ،عدالت نے کیا حکم سنا دیا؟جانئے

  بدھ‬‮ 15 مئی‬‮‬‮ 2019  |  16:05

بہاول پور( آن لائن)مسیحی لڑکی نے اسلام قبول کے بعد مسلم نوجوان سے نکاح کر لیا ،لڑکی کے والدین نے لڑکے پر اغوا کا مقدمہ درج کروادیا ،نوبیاہتا جوڑا تحفظ کے لیے لاہور ہائی کورٹ بہاول پور بنچ پہنچ گیا ۔تفصیل کے مطابق خان پور کی رہائشی مسیحی گھرانے کی مہوش نے قبول اسلام کے بعد لیاقت پور کے رہائشی رضوان سے نکاح کیا تھا ۔ جس پر لڑکی کے والدین نے رضوان کے خلاف تھانہ میں اغوا کا مقدمہ درج کرادیا جس پر نوبیاہتاجوڑا اپنے تحفظ کے لیے عدالت عالیہ پہنچ گیا ۔لاہور ہائی کورٹ بہاول پور بینچ کے


جج جسٹس صادق خرم نے کیس کی سماعت کے بعد مقدمہ خارج کرنے کا حکم دے دیا ۔عدالت عالیہ لے باہر مہوش نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اپنی مرضی سے اسلام قبول کیا اور نکاح کیاوالدین زبردستی واپس لے جانا چاہتے ہیں۔نوبیاہتا جوڑے نے حکومت سے تحفظ فراہم کرنے کی اپیل کی ہے۔

موضوعات:

loading...