ہمیں آئی ایم ایف کی ہدایات کی ضرورت نہیں ،آئی ایم ایف کا انتظار کرنے سے پہلے روپے کی قدربارے کیا کام کیا؟ وزیر خزانہ کا بی بی سی کو دیے گئے انٹرویو میں انکشاف

  بدھ‬‮ 12 دسمبر‬‮ 2018  |  21:44

لندن (آن لائن) وزیر خزانہ اسد عمر نے کہا کہ ہم نے عالمی مالیاتی ادارے آئی ایم کی جانب سے شرائط کے انتظار سے پہلے ہی ملکی کرنسی کی قدر میں کمی، شرح سود اور قدرتی گیس کی قیمتوں میں اضافے جیسے اقدامات اس لیے کیے ہیں کہ ہمیں یہ ضروری لگ رہے تھے۔ ہمیں آئی ایم ایف کی ہدایات کی ضرورت نہیں ہم وہ کر رہے ہیں جو ہمیں کرنے کی ضرورت ہے’امریکہ کو اپنے چینی قرضے کے بارے میں فکر کرنے کی ضرورت ہے‘بلوچستان میں شدت پسندی کے واقعاتبلوچستان کے لوگوں کا غصہ نہیں ہے اور یہ سپانسر

دہشت گردوں کی سرگرمیاں ہیں بی بی سی کو دیئے گئے انٹرویو میں وزیر خزانہ نے کہا کہ ہم نے آئی ایم ایف کی پابندیوں اور شرائط کا انتظار نہیں کیا بلکہ معیشت کی بہتری کے لیے حکومت کے پہلے سو دن کے اندر خود ہی متعدد اقدامات کیے۔ہم نے حکومت کے پہلے سو دن کے اندر گیس اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ کیا، نئے ٹیکس لگائے، شرحِ سود میں اضافہ کیا اور ملکی کرنسی کی قدر میں کمی کی۔انھوں نے کہا کہ اقتصادی اور مانیٹرنگ پالیسی اصلاحات کی صحیح سمت میں جا رہے ہیں جس کی ضرورت ہے اور ہمیں ضرورت نہیں کہ آئی ایم ایف اس کے بارے میں ہمیں ہدایات دے بلکہ ہم وہ کر رہے ہیں جو ہمارے خیال میں ہمیں کرنے کی ضرورت ہے۔تاہم وزیر خزانہ نے تصدیق کی کہ اس وقت اصلاحات کے معاملے پر آئی ایم ایف اور حکومت کے درمیان اختلافات ہیں لیکن بات چیت جاری ہے جس میں اس بات پر اختلاف رائے نہیں کہ کیا کرنے کی ضرورت ہے بلکہ اقدامات کی رفتار، ترتیب اور وسعت پر اختلاف ہے۔آئی ایم ایف سے حاصل ہونے والے قرضوں سے چین کے قرضوں کی ادائیگی کے بارے میں امریکی حکومت کے خدشات پر ایک سوال کے جواب میں وزیر خزانہ نے کہا کہ ’اس کا جواب بڑا سادہ ہے کہ ہمیں چینی قرضے کی فکر ہونی چاہیے لیکن پومپیو (امریکی وزیر خارجہ) کو چینی قرضے کے اپنے مسئلےپر فکرمند ہونے کی ضرورت ہے کیونکہ دنیا میں امریکہ چین کا سب سے بڑا مقروض ہے جو کہ 13 کھرب ڈالر ہے جبکہ پاکستان پر چینی قرضہ ملک کے مجموعی بیرونی قرضوں کا دس فیصد ہے۔‘انھوں نے اس کے ساتھ سوال کیا کہ’ ہم گذشتہ 30 برسوں میں آئی ایم ایف سے 12 مختلف پروگراموں میں گئے لیکن یہ سوال پہلے کیوں نہیں پوچھا گیا کہ کس ذرائع اور کس ملک نے پاکستان کو کتنا قرضہ دے رکھا ہے؟‘پاکستان کے وزیر خارجہ اسد عمر نے سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل کے بعدمغربی ممالک کی سعودی عرب سے دوری اور اس دوران پاکستان کی جانب سے سعودی عرب سے بیل آؤٹ پیکیج لیے جانے کے بارے میں سوال کے جواب میں سعودی امداد کا دفاع کیا۔’ہو سکتا ہے کہ مغربی رہنماؤں کو خود سے شرمندگی محسوس ہو جو جمہوریت اور آزادی کی بات کرتے ہیں اور پھر انہی سعودی پیسوں کے لیے جاتے ہیں تاکہ اربوں ڈالر مالیت کے معاہدے کر سکیں۔ مغربی دنیا کے رہنما صدر ٹرمپ اٹھ کھڑے ہوئے اور کھلے عام کہا کہ وہ سعودی عرب سے بہت زیادہ بزنس لے رہے ہیں اورمیرے لیے پریشانی نہیں کہ خاشقجی کے ساتھ کیا ہوا۔ پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں چینی منصوبوں کے بارے میں پائے جانے تحفظات اور وہاں شدت پسندی کے واقعات کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں وزیر خارجہ اسد عمر نے کہا کہ ’یہ بلوچستان کے لوگوں کا غصہ نہیں ہے اور یہ سپانسر دہشت گردوں کی سرگرمیاں ہیں جو پاکستان کے باہر سے مالی وسائل اور تربیت حاصل کرتے ہیں۔’بلوچستان کو عدم استحکام سے دوچار کرنے اور اس کے ذریعے سی پیک کو عدم استحکام سےدوچار کرنے کی سنجیدہ کوششیں ہیں اور اس پر کوئی اختلاف رائے نہیں ہے۔’اس کی سربراہی انڈیا کر رہا ہے۔ ہم نے انڈیا کا ایک سینیئر آپریٹر کلبھوش یادو پکڑا ہے جس نے تفصیل بتائی ہے کہ کس طرح انڈیا بلوچستان اور پاکستان کے دیگر علاقوں میں مداخلت کر رہا ہے تو ہاں بلوچستان میں دہشت گرد مداخلت ہو رہی ہے اور جہاں تک بلوچستان کے لوگوں کی بات ہے تو انھیں نے اپنی مرضی سے حکومت کا انتخاب کر کے کیا ہے جو سی پیک کے ساتھ کھڑی ہے اور اپنے صوبوں میں سی پیک کی زیادہ سرگرمیاں دیکھنا چاہتے ہیں۔

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں