اب ہوگا دمادم مست قلندر، پیر حمید الدین سیالوی نے ایسا دھماکہ خیزاعلان کردیا کہ رانا ثناء اللہ کے ہوش اڑ گئے،3دن بعد کیا ہونے جارہا ہے

  بدھ‬‮ 6 دسمبر‬‮ 2017  |  13:40

فیصل آباد (آئی این پی) معروف روحانی شخصیت اور سجادہ نشین آف سیال شریف خواجہ حمید الدین سیالوی نے رانا ثناء اور شہباز شریف کو دی گئی ڈیڈ لائن ختم ہونے پر فیصل آباد کے تاریخی گرائونڈ دھوبی گھاٹ میں ’’ختم نبوت کانفرنس ‘‘ کے انعقاد کا اعلان کردیا ہے اور سنی اتحاد کونسل کے سربراہ صاحبزادہ حامد رضا کو ہدایت کی ہے کہ وہ اس حوالے سے تمام انتظامات کو حتمی شکل دیں۔ پیر آف سیال شریف کے خواجہ نظام الدین سیالویایم پی اے خصوصی پیغام لیکر صاحبزادہ حامد رضا کے پاس پہنچے جس پر صاحبزادہ حامد رضا نے

ان کو بھر پور تعاون کا یقین دلایا۔ دونوں رہنمائوں کے درمیان میٹنگ کے بعد ختم نبوت کانفرنس کی اجازت کے لیے ڈی سی فیصل آباد کو تحریری درخواست جمع کروادی گئی ہے جس میں جلسے کے لیے صبح 11بجے سے شام 5بجے تک کا وقت مقرر کیا گیا ہے۔سجادہ نشین آف سیال شریف کانفرنس میں خصوصی شرکت کریں گے۔ ڈی سی آفس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سنی اتحاد کونسل کے سربراہ صاحبزادہ حامد رضا نے کہا کہ 10دسمبر کو ختم نبوت کانفرنس کا بڑا اجتماع ہو گا۔رانا ثنا کومعافی بھی مانگنی ہے اور استعفیٰ بھی دینا ہے۔ رانا ثنا کے بیان سے کروڑوں عاشقان رسول کے جذبات مجروح ہوئے۔ رانا ثنا اپنے بیان سے متعلق شرعی تقاضے پورے کریں۔امید ہے پر امن کانفرنس کے انعقاد کے لیے اجازت مل جائے گی۔کانفرنس میں شرکت کے لیے تمام مکاتب فکر کو دعوت دی جارہی ہے۔ 10دسمبر کو صرف دھوبی گھاٹ میں ختم نبوت کانفرنس کا اجتماع ہو گا ۔ ریلی اور دھرنے کا کو ئی پروگرام نہیں ہے۔ اس موقع پر خواجہ نظام الدین نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہماری دعوت قبول کرنے پر صاحبزادہ حامد رضا کے مشکور ہیں۔ رانا ثنا کے شہر میں ختم نبوت کانفرنس کا مقصدانہیں استعفیٰ پر مجبور کرنا ہے۔ شہباز شریف کی درخواست پر ڈیڈ لائن میں توسیع کی تھی لیکن کو ئی خاطر خواہ جواب موصول نہیں ہوا۔ سجادہ نشین سیال شریف رانا ثنا کے متعلق ہر قسم کے فیصلے کا اختیار رکھتے ہیں۔ تمام مذہبی و سیاسی جماعتوں کوختم نبوت کانفرنس میں شرکت کی دعوت دیتے ہیں۔ 50سے زائد گدی نشین مشائخ ہمارے ساتھ ہیں۔ رانا ثنا نے استعفیٰ نہ دیا تو مشائخ اپنے لاکھوں مریدین کے ساتھ ن لیگ سے لاتعلقی کا اعلان کریں گے۔

موضوعات:

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں