برما کے بعد مقبوضہ کشمیرمیں کیا گھنائونا کھیل کھیلا جا رہا ہے، المناک داستان سامنے آگئی

  جمعرات‬‮ 14 ستمبر‬‮ 2017  |  12:39

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)بھارت کی افغانستان ، پاکستان ، برما میں مسلمانوں کے خلاف دہشتگردی کسی سے اب ڈھکی چھپی نہیں رہی۔بھارتی افواج کا مکروہ چہرہ اور خود بھارت کے اندر اس کی انسانیت سوز سرگرمیوں کا بھانڈا آسام ، ناگا لینڈ، منی پور میں بھی پھوٹ چکا ہے جہاں خواتین نے بھارتی افواج کے خلاف عصمت دری کے واقعات میں ملوث ہونے کا ثبوت پیش کرتے ہوئےبرہنہ مظاہرے کئے ہیں اور ان کے ہاتھوں میں موجود بینرز دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے دعویدار بھارت کے منہ پر ایک زوردار طمانچہ تھے۔ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال بھی کچھ کم

نہیں اور بھارتی قابض افواج مقبوضہ کشمیر کے عوام کو اپنا غلام سمجھتے ہوئے اندوہناک مظالم کا سلسلہ کئی دہائیوں سے جاری رکھے ہوئے ہے۔ وہاں قابض فوج مسلمان اکثریت کو اقلیت میں بدلنے کیلئے طرح طرح کے حربے تو استعمال کر ہی رہی ہے اور اس سلسلے میں نوجوانوں کا قتل عام ، ٹارچر سیلوں میں اذیتیں کوئی نئی بات نہیں مگر مقبوضہ کشمیر کی خواتین بھی قابض بزدل بھارتی فوجیوں کے مظالم سے نہیں بچ سکیں۔ اسی طرح کا ایک واقعہ 23فروری 1991کا ہے جب مقبوضہ کشمیر کے ضلع کپواڑہ کے چھوٹے سے گائوں کنن میں دن بھر کی مصروفیات اور گہما گہمی کے بعد زرینہ اور زونی (فرضی نام) رات کو سونے کی تیاری کر رہی تھیں، کہ اچانک دروازے پر دستک ہوئی رات جب زرینہ اور زونی نے دروازے پر فوج کو دیکھا تو سمجھ گئیں کہ یہ کریک ڈاؤن ہے۔حسب معمول مردوں کو الگ کر دیا گیا اور فوج گھروں میں گھس آئی لیکن اس کے بعد جو ہوا اسے یاد کرتے آج بھی زونی کی آنکھیں بھر آتی ہیں۔ہم سونے کی تیاری کر رہے تھے کہ فوج آگئی۔ انھوں نہ مردوں کو باہر نکال دیا۔ کچھ نے ہمارے سامنے شراب پی۔میری دو سال کی بچی میری گود میں تھی۔ ہاتھا پائی میں وہ کھڑکی سے باہر گر گئی۔ وہ زندگی بھر کے لیے معذور ہو گئی۔ تین فوجیوں نے مجھے پکڑ لیا۔ میرا پھیرن، میری قمیض پھاڑ دی۔ اس کے بعد مجھے نہیں معلوم کہ کیا کیا ہوا۔ وہ پانچ لوگ تھے۔ ان کی شکلیں مجھے اب بھی یاد ہیں۔زرینہ بھی اسی گھر میں موجود تھیں۔ اُن کی شادی کو صرف 11 دن ہوئے تھے۔میں اسی دن میکے سے واپس آئی تھی۔ فوجیوں نے میری ساس سے پوچھا کہ یہ نئے کپڑے کس کے ہیں۔ میری ساس نے کہا یہ ہماری نئی دلھن ہے۔ اس کے بعد جو ہوا میں بیان نہیں کر سکتی۔ ہمارے ساتھ صرف زیادتی نہیں ہوئی، ایسا ظلم ہوا ہے جس کی کوئی حد نہیں۔ زرینہ اور زونی کی یہ المناک کہانی تو صرف ایک داستان ہے ظلم کے پہاڑ آج بھی مقبوضہ کشمیر میں توڑے جا رہے ہیںاور وہاں کے کشمیری عوام آج بھی اقوام متحدہ سے اس وعدے کو نبھانے کی راہ تک رہے ہیں جو ان سے آج سے 70سال قبل کیا گیا تھا جس میں ان سے وعدہ کیا گیا تھا کہ انہیں حق خودارادیت دیا جائے گا،مقبوضہ کشمیر کی خواتین آج بھی اپنی لٹی عصمتوں کے ساتھ کسی محمد بن قاسم کی راہ تک رہی ہیں۔آج اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے میانمار حکومت پر سخت تنقید کرتے ہوئےاسے روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام میں ملوث قرار دیتے ہوئے رخائن میں مسلمانوں کے قتل عام کو نسل کشی قرار دیا ہے مگر کیا اقوام متحدہ مقبوضہ کشمیر کی جانب بھی اپنی نظر کرم ڈالے گا جہاں کئی ہزار خواتین کی بھارتی قابض افواج عصمتیں لوٹ چکی ہے، جہاں کئی ہزار نوجوان اقوام متحدہ کے وعدے اور چارٹر کی پاسداری میں جانیں قربان کر چکے ہیں، جہاں کےٹارچر سیل آج بھی دن رات بھیانک چیخوں سے گونج رہے ہیں، جہاں کے ندی نالوں اور دریاآج بھی بے گناہ کشمیریوں کے لاشے اگل رہے ہیں۔

موضوعات:

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں